HTV Pakistan

شاعری

اب کس کا جشن مناتے ہو، اس دیس کا جو تقسیم ہوا …… پروین شاکر

اب کس کا جشن مناتے ہو، اس دیس کا جو تقسیم ہوا اب کس کے گیت سناتے ہو، اس تن من کا جو دونیم ہوا اس خواب کا جو ریزہ ریزہ ان آنکھوں کی تقدیر ہوا اس نام کا جو ٹکڑا ٹکڑا گلیوں میں بے توقیر ہوا اس پرچم کا جس کی حرمت بازاروں میں نیلام ہوئی اس مٹی کا ...

مزید پڑھیں »

پروین شاکر

فیصل ظفر ’محبت کا فلسفہ میری شاعری کی بنیاد ہے اور اسی کے حوالے سے اس ازلی مثلث یعنی انسان خدا اور کائنات کو دیکھتی اور سمجھتی ہوں۔‘ یہ بات ایک انٹرویو کے دوران اپنی شاعری سے جوانوں سے لے کر بزرگوں تک کا دل جیت لینے والی شاعرہ پروین شاکر نے کہی تھی۔ اردو کے منفرد لہجے کی شاعرہ ...

مزید پڑھیں »

اشک اپنی آنکھوں سے خْود بھی ہم چھْپائیں گے

اشک اپنی آنکھوں سے خْود بھی ہم چھْپائیں گے تیرے چاہنے والے شور کیا مچائیں گے صْبح کی ہَوا تجھ کو وہ ملے تو کہہ دینا شام کی منڈیروں پر ہم دیئے جلائیں گے ہم نے کب ستاروں سے روشنی کی خواہش کی ہم تمہاری آنکھوں سے شب کو جگمگائیں گے تْجھ کو کیا خبر جاناں ہم اْداس لوگوں پر ...

مزید پڑھیں »

گمان

میں کچی نیند میں ہوں اور اپنے نیم خوابیدہ تنفس میں اترتی چاندنی کی چاپ سنتی ہوں گماں ہے آج بھی شاید میرے ماتھے پہ تیرے لب ستارے ثبت کرتے ہیں

مزید پڑھیں »

پیار

ابرِ بہار نے پھول کا چہرا اپنے بنفشی ہاتھ میں لے کر ایسے چوما پھول کے سارے دکھ خوشبو بن کر بہہ نکلے ہیں

مزید پڑھیں »

واہمہ

تمھارا کہنا ہے تم مجھے بے پناہ شدت سے چاہتے ہو تمھاری چاہت وصال کی آخری حدوں تک مرے فقط میرے نام ہوگی مجھے یقین ہے مجھے یقین ہے مگر قسم کھانے والے لڑکے تمھاری آنکھوں میں ایک تل ہے!

مزید پڑھیں »

ہے ابھی لمس کا احساس مرے ہونٹوں پر

ہے ابھی لمس کا احساس مرے ہونٹوں پر ثبت پھیلی ہوئی باہوں پہ حرارت اس کی وہ اگر جا بھی چکی ہے تو نہ آنکھیں کھولو ابھی محسوس کئے جاؤ رفاقت اس کی وہ کہیں جان نہ لے ریت کا ٹیلہ ہوں میں میرے کاندھوں پہ ہے تعمیر عمارت اس کی بے طلب جینا بھی شہزاد طلب ہے اس کی ...

مزید پڑھیں »